میرے استاد

استاد- یہ لفظ شائد آج کل کی اربن جنریشن اتنا استعمال نہ کرتی ہو یا پھر ان کو اردو میں بولنے میں دقت محسوس ہوتی ہو، لیکن میرے لئے بہت اہمیت رکھتا ہے- پانچویں جماعت سے لے کر میٹرک تک یہ لفظ روزانہ کی زندگی کا ایک بڑا حصہ تھا- پنجاب میں گورنمنٹ یا اردو میڈیم سکولوں میں زیادہ تک پنجابی بولی جاتی ہے تو لفظ استاد پنجابی تڑکے کے بعد ‘استاداں” ہو جاتا تھا۔

"استاداں آکھیا اے کہ چھٹی کیتی تے چار ڈنڈے پین گے”

مطلب کہ استاد جی نے کہا ہے کہ اگر چھٹی کی تو چار ڈنڈے پڑینگے جو اگلے دن پڑتے بھی تھے۔

مجھے آج تک سمجھ نہیں آیا کہ ان اساتذہ کو کیا ملتا تھا ہمیں چھٹی کرنے پر سزا دے کر؟ وہ کیوں ہماری اتنی فکر کرتے تھے، کیوں گھروں سے بلوا لیتے تھے- پھر سوچتا ہوں کہ یہ ان کی ایمانداری تھی جو انہیں ہمارے مستقبل کی فکر اپنے بچوں کی طرح تھی۔

مجھے پوری زندگی اچھے اساتذہ ملے اور اللہ کا شکر ہے ہم میں اپنے اساتذہ کا مذاق اڑانے کا رواج بھی کوئی اتنا خاص نہیں تھا- ہمارے گورنمنٹ سکول پرائیویٹ سکولوں کا مقابلہ کرتے تھے، بورڈ میں پوزیشنز آتی تھیں- امید ہے اب بھی ایسا ہی ہوتا ہوگا۔

پچھلے دنوں میں بہت عرصہ کے بعد اپنے آبائی قصبہ گیا اور اپنے میٹرک کے استاد کو انکے گھر جا کر ملا- وہ ٹوئٹر پر نہیں ہیں اور اسکا استعمال بھی نہیں جانتے لیکن انہیں پتہ ہے کہ میں ٹوئٹر کے لئے کوئی کام کرتا ہوں- ملتے ہی انہوں نے سب سے پہلے سوال یہ کیا کہ "احسن یہ بتاؤ کہ یہ تھری جی اور فورجی کے آنے سے کوئی فرق بھی پڑے گا کہ نہیں؟”، مجھے پتہ تھا کہ انکے سوا شاید ہی اس وقت کا کوئی اور استاد اس جگہ پہ ان لائنز پر سوچتا ہوگا۔

کیا عظیم زندگی ہے انکی بھی، پوری زندگی گاؤں کے بچوں کو پڑھاتے گزری اور ابھی بھی گزر رہی ہے، صبح سے شام تک وو گورنمنٹ سکول میں پڑھانے کے بعد اپنے سکول بھی چلاتے ہیں- ان کے طلبا فوج سے لے کر بڑے بڑے حکومتی اداروں میں کام کرتے ہیں اور بہت سے بیرون ملک چلے گئے، لیکن میرے استاد وہیں ہیں اور آئندہ کی نسلوں کو پڑھا رہے ہیں۔

اپنے استاد کی آنکھوں میں اپنی وجہ سے دیکھی گئی خوشی سے بڑا لمحہ اور کیا ہو سکتا ہے۔

میرا اپنے قصبے میں گزارے گئے تمام وقت میں سے وہ آدھا گھنٹہ بہت ہی قیمتی تھا جو میں نے اپنے استاد کے پاس گزارا- یہ وہ انسان ہیں جو بلا غرض کے دوسروں کے بچوں کی زندگیاں سنوارتے ہیں۔

اب تعلیم کو کاروبار بنا دیا گیا ہے، تو سکولوں میں بھی کاروبار ہی نظر آئیگا اور اسکے بدلے میں بچے بھی وہ عزت و احترام نہیں دیتے اپنے اساتذہ کو جو انہیں دینا چاہیے۔

بہت خوش قسمت ہوں میں جو مجھے بہترین استاد ملے، کرسیاں نہیں ملیں بیٹھنے کو تو کیا ہوا، اپنے استاد کے دلوں میں تو بیٹھے ہیں نا۔

Ustaad. Ye lafz shyd aaj kal ki urban generation itna istemaal na kerti ho ya phir unko Urdu main bolne main diqqat mehsoos hoti ho, lekin ye lafz mere liay bohat ahmiyat rakhta hai. Paanchvin jamat se le ker matric tak yeh lafz rozana ki zindagi ka ek bara hissa tha. Punjab main Government aur Urdu medium schools main zyada tar Punjabi boli jati hai tou lafz ustad Punjabi tarkay k baad "ustaadan” ho jata tha. "Ustaadan aakhya aey k chhutti keeti te 4 danday payn ge.” Matlab k Ustaad jee ne kaha hai k chhutti ki tou 4 danday parainge aglay din, jo k waqai partay bhi thay. Mujhe aik baat ki samajh nahi aai k un teachers ko kya milta tha humain chhuti kerne pe saza de ker? Wo kyun humari itni fiker kertay thay. Ye sab unki humaray mustaqbil ki fiker aur apne kaam se imandari thi. Mujhe poori zindagi achay ustaad milay aur Allah ka shuker hai hum main apne usaatza ka mazaq uranay ka riwaj bhi koi itna khas nahi tha. Humaray government schools private schools ka muqaabla kertay thay, board main positions aati thien. Umeed hai ab bhi aisa hi hota ho. Pichlay dinon main bohat arsa baad apne hometown gaya aur apne matric k ustad ko unke ghar ja ker mila. Wo twitter pe nahin hain lekin unko pata hai k main Twitter k liay koi kaam kerta hun. Milte hi unho ne sab se pehla sawal ye kiya k "Ahsan ye batao k ye jo 3G, 4G k baad koi farq parayga?”. Mujhe pata tha unke siwa shyd hi koi wahan in lines pe sochta ho. Unki poori zindagi gaon k bachon ko parhatay guzar gai, subah se shaam tak wo govt school main parhanay k baad apna school bhi chala rahay hote aur aaj bhi wohi ker rahay hain. Unke students army se le baray govt institutions main hain, bohat se bahir ja chukay hain. Apne ustaad ki ankhon main apni wajah se dekhi gai khushi se zyada bara lamha aur kya ho sakta hai. Mere visit ka wo adha ghanta mere liay sab se zyada khushi ka waqt tha. Ye wo insan hain jo bila kisi gharz k doosron k bachon ki zindagiyan sanwartay hain. Ab taleem ko kaarobar bana dia gaya hai, tou schools main bhi karobaari hi nazar aayenge. Ussi k response main bachay bhi ab wo izzat nahi kerte teachers ki jo pehle log kiya kerte thay. Bohat khushqismat hoon main mujhe behtreen ustaad milay, kursiyan nahi mileen bethne ko tou kya hua, apne ustaad k dilon main tou bethay hain na.

Advertisements

11 خیالات “میرے استاد” پہ

  1. اریبه

    آنکھوں میں نمی آگئی. بہت ہی بہترین. حالاں کہ میں نے پنجاب میں ہی تعلیم حاصل کی اور اپنے اساتذہ کو کبھی ‘استانی’ یا ‘استاد’ نہیں کہا کیوں کہ میرا اسکول ایک پرائیویٹ اسکول تھا لیکن اساتذہ کی عزت اور احترام ہمارے وقت کے لوگوں کا خاصا تھا. اب کے بچے ان تمام چیزوں سےعاری ہیں اور وجوہات آپ بیان کر چکے ہیں. آ تھمبز اپ. 🙂

    پسند کریں

  2. Mein is tehreer mein usatiza k baray mein byan kiye gaye jazbat aur tasurat sey bohat mutasir hui hun. Ye ek haqeeqat hai k kubi wo zamana tha k ustaad mohabbat, khyal, ehsas, aur mehnat ka nam tha. Magr ab wo usatiza mayeser nai. Meray nana jub bi apnay ustatiza k baray mein baat kertay hain tou unki ankhain bhar ati hain. Magr mein ye samjhti hun k mein aur meray hum asar talib ilm shayad apnay usatiza k baray mein aisay jazbat kubi na rakh saken kyun k usatiza ki aksariyat us muhabat aur khloos sey ari hai jo k ek talib ilm ka haq hota hai. Aur is cheez ki wja sey aj k talib ilm mein muhabat aur farmabardari ka unsar khtm ho chuka hai. Aisa nai hai k aj kal k dor mein achay usatiza ya achay talib ilm nai hain. Mainay bohat sey idaro mein taleem hasil ki hai magr in saray salo mein sirf do ya teen usatiza thay jinhoney mujhey samjha aur mujhey mutasir kiya. Aur mein unko kubi nai bhool sakti aur zindagi bhar unki shukar guzar rahunge aur unka tazkara hamesha izzat aur ehtram sey kerti rahunge. Mein apni is raye sey is bat ka ikhtitam kerna chahti hun k achay usatiza hamesha yad rehtay bi hain aur unko yad rakhna bi chahyie. Mujhey is tehreer sey himmat mili k mein bi apnay dor-e-talib-e-ilmi k tajarbat k baray mein likhun. Aur mein khas tor per ye kehna chahti hun k mujhey bohat khushi hui k aap ney apnay jazbat ka izhar urdu mein kia. Meri is taweel raye sey apko pareshani hui hai tou mein usk liye mazrat khua hun. 🙂

    پسند کریں

  3. when i was halfway through, i had tears in my eyes. I am of the generation that doesn’t respect its teachers. Nor do the teachers respect us. But this is only in my med school that i feel this way.

    I come from an old fashioned boarding school where values such as respecting our elders and obeying them were promoted. After reading your piece, it took me back to those days. I think the conenction of innocence makes things better. Innocent kids, innocent feelings, pure intentions. Just purity. Purity connected us, made us feel loved, and in return we gave love. But it is just so hard to find all that.

    I have felt it, i have known it. And so have you. And i love that you wrote it out.

    پسند کریں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s