Main Paindu Hi Theek Hoon

میں ایک قصبہ میں پیدا ہوا ہوں جہاں لڑکوں اور لڑکیوں کے لیے گورنمنٹ کا ایک پرائمری اور ہائی سکول تھے اور باقی کچھ پرائیویٹ سکول تھے، جہاں پانچویں جماعت تک مخلوط تعلیمی نظام تھا- جہاں کوئی پبلک پارک نہ تھا، ایک سول ہسپتال اور کچھ کلینک تھے- جہاں کوئی کالج نہ تھا، میٹرک کے بعد پڑھنے دوسرے شہر جانا پڑتا یا پھر گھر بیٹھ کر پرائویٹ امتحان- جہاں گورنمنٹ سکول میں بیٹھنے کو کرسیاں نہ تھیں، ڈنڈے کھانا اور مرغا بن کر مار کھانا روز کا معمول تھا- انگریزی تو دور کی بات وہاں بہترین اردو پڑھانے اور بولنے والے استاد بہت کم تھے- انٹرمیڈیٹ کی ٹیوشن پڑھنے بھی قریب کے کسی شہر روزانہ بس میں جانا آنا ہوتا تھا- میں نے وہاں سولہ سال گزرے، وہیں رہا، پڑھا اور پھر کالج کی تعلیم کے لیے لاہور چلا گیا اور وہاں سے کراچی

شہر میں آ کر پتہ چلا کہ بھائی جان آپ تو "پینڈو” ہیں- آپ کو اردو ٹھیک سے بولنا نہیں آتی، کیوں کہ آپ کا لہجہ نہیں ٹھیک، انگریزی آپ کے سر کے اوپر سے گزر جاتی ہے- آپ تب تک ہی اچھے لگتے ہیں جب تک آپ کا منہ بند ہے- اگر آپ واقعی پڑھے لکھے ہیں تو انگریزی بولنا تو ضرور آنی چاہیے ورنہ آپ ٹھہرے جاہل اور گنوار- لیکن اگر تھوڑا منہ ٹیڑھا کر کے انگریزی بول لیتے ہیں تو آپ جیسا ہونہار اور قابل انسان پورے پاکستان میں کوئی نہیں- اگر آپ لڑکیوں سے آنکھوں میں آنکھیں ملا کر بات نہیں کرتے یا ان سے گھل مل کر ہاتھ نہیں ملاتے تو آپ بے باک اور پراعتماد نہیں ہیں کیوں کہ آپ ایک گاؤں سے آئے ہیں اور آپ پینڈو ہیں- آپ کی حس مزاح بھی پینڈو ہے اور آپ کی باتیں بھی

شہری بننا ہے تو آپ کو شہری زندگی سیکھنا ہوگی- انگریزی میوزک سننا ہوگا، بنا کسی غلطی سے انگریزی بولنا اور لکھنا ہوگی، غلطی ہو گئی تو آپ پینڈو ہیں، کیونکہ پرفیکٹ انگریزی بولنا ہی آپ کے پڑھا لکھا اور شہری ہونے کی ضمانت ہے- اردو بھی پرفیکٹ لہجے میں بولنا ہوگی، اگر نہ بول پائے یا بولنا ہی نہیں چاہتے تو آپ پینڈو ہیں

زبردستی لوگوں کے ساتھ گھل مل کر بیٹھنا ہوگا، نئی سے نئی باتیں کرنا ہونگی، اپنے باہر کے قصے سنانا ہونگے، اگر آپ یہ سب بھی نہ کر پائے تو آپ پینڈو ہونے کے ساتھ ساتھ نخرے باز بھی ہیں

لیکن پھر میں سوچتا ہوں کہ ان سب "خامیوں” اور "خرابیوں” کے ساتھ بھی اگر میں اپنے لیے اور اپنے ملک کے لیے وہ کر پا رہا ہوں جو بہت سے لوگ شہر میں رہ کر اور اعلیٰ تعلیمی اداروں میں پڑھ کر نہ کر پائے تو بھائی، میں پینڈو ہی ٹھیک ہوں

 

Main aik qasba main paida hua hoon jahan larkon aur larkiyon k liay 1, 1 govt. primary aur high schools thay aur baqi kuch private schools thay. Private schools main bhi co-education bas class 5 tak thi. Jahan koi public park na tha, 1 civil hospital tha aur kuch clinics. Jahan koi college na tha, matric k baad parhnay doosray shehr jana parta ya phir ghar beth k private exams. Jahan govt schools main bethne ko kursiyan na thein, danday parna, murgha ban k maar khana roz ka mamool tha. English tou door ki baat perfect Urdu bolnay aur parhaanay walay teachers bohat kam thay. Inter ki tution parhne bhi qareeb k kisi shehr rozana Bus main jana ana hota tha.
Main 16 saal wahan raha, wahin parha aur Matric k baad F.Sc kerne Lahore chala gaya aur phir wahan se Karachi.

Shehr main aa ker mehsoos hua k bhai jaan aap tou "paindu” hain. Aap ko Urdu theek se bolna nahi aati, kyun ke apka accent nahi theek, English aap k sar k oper se guzar jati hai. Aap tab tak hi achay lagte hain jab tak aapka mu band hai. Agar aap waqai educated hain tou English tou aani chahiye aap ko warna aap unparh hain. Lekin aap thora mu terha ker k English bol letay hain tou aap jesa valuable aur kaar-amad insan pooray Pakistan main koi nahi. Agar aap larkiyon se ankhon main ankhain mila k baat nahi kerte ya un se hath nahi milatay tou aap confident nahi hain kyun k aap pind se aaye hain. Aap ka sense of humor bhi paindu hai aur apki batain bhi.

Shehri ban’na hai tou apko urban life seekhna hogi.

English music sun’na hoga, bina kisi ghalti k English likhni aur bolni hogi, ghalti hogai tou aap paindu hain.

Kyun k perfect English bolna hi aap k parha likha aur shehri hone ki zamanat hai. Urdu perfect accent main bolna hogi, warna aap paindu hain.

Zabardasti logon k sath ghul mil k bethna hoga, nayi se nayi batain kerna hongi. Apne bahir k qissay sunana honge. Agar ye sab nahi ker paye tou aap paindu k sath sath nakhray baaz bhi hain.

Lekin in sab "kharabiyon” k sath bhi agar aap apne liay aur apne mulk k liay wo ker pa rahay hain jo bohat se shehr main rehne walay baray educational institutes main parh k na ker paye tou bhai, main paindu hi theek hoon.

Advertisements

14 خیالات “Main Paindu Hi Theek Hoon” پہ

  1. Reblogged this on That Paki Blog and commented:
    I spoke English and am now naturally inclined to think in that. But when I got out of my cocoon and entered the real world, I realized how important it is know your mother tongue. As a dentist, I see many patients in the hospital who don’t know how to speak urdu, and our seniors, they don’t know how to speak punjabi. So having spent the past 8 years out of my shell, I realized how lucky i am to have learnt all that i did. Sure, i look like a walking talking engraiz putla, but deep down, i know where myroots are.

    Our obsession with the english language takes us away from our roots. Like katy perry say
    "I don’t drink champagne
    When I’m back home with my friends
    We sip on tea on the porch
    ‘Cuz I’m still the girl next door
    No fancy things when I come off tour
    I slip back into my jeans
    ‘Cuz I’m still the girl next door,”

    I realize how true this verse from her song Girl Next Door is. We forget that this is who we are, this is a part of our culture, and it is up to us to know it, learn it, and keep it alive. Being paindu is us, Being paindu is Pakistani and being Pakistani is Paindu. That’s one aspect of patriotism. And be proud to be a Pakistani…be proud to be a paindu.

    Don’t let the glitter fool you. In the end, har koi gaon hi ho k reh jata hai!

    Liked by 2 people

  2. kashaf asim

    Dekhein bhei. Saaf si baat kehrahee houn main. Mujhay samajh mein nahe ata ke main English kyun boloun? Kyun fakhar karun ke mujhay English aati hai? Meri maadri zabaan Urdu hai tou phir ik esi zabaan ke peechay kyun bhaagun jo wesay bhi ik colonial language hai? Mujhay itna shadeed gussa ata hai jab log kisi ki angrezi ka mazaq uratay hein. Dil chahta hai waheen dou teen raseed doun unkay gaal pay.
    Main ne abhi chand maheenay phele he Urdu mein khutoot likhna shuru kiye. Main ne socha ke shayad hum sab agar khutoot likhain, aur woh bhi Urdu mein tou shayad logoun ka Urdu parhnay ka shauq ubhar aye ga. Apni taraf se koshish ki. Logoun se kehti houn ke mujhay woh apna address dein dein; main unko khat likh ke bhejun gi.

    Liked by 1 person

  3. I think this is a great post Ahsan.

    I’m proud of the fact that I can write and speak passably good English as well as Urdu. I’m more comfortable with English though, no idea why.

    The point you have raised, I feel, is not limited to language. It’s the mindset of people to look down upon or question anything the feel is against the ‘status quo’ of their culture.

    You are more grounded and learned then many people who claim to be intellectuals just because they know how to use a thesaurus. (Y)

    پسند کریں

  4. Hira Nazir

    Apkey lehjey aur alfaz mein aik khoobsorat tehrao hai, aur ies se paata lagta hai ke apka dil bohot muma’in hai. Bari kamiyab aur pur sakoon zindagi jiyen ge app, Insha’Allah. Barey tahamul waley bandey lagtey hain app. Abhi bhala inkar karein app, woh bhi sirf apni ijz-o-inkisari ki waja se, lekin aik mor pe apko ehsas hoga ke hamari baat drust thi.
    Khuda apko hamesha khush rakhey. Hamrey bas me sirf dua karna hi hai, jo hum baghair poochey kartey hain, apkey haq mein.

    پسند کریں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s